DAWATUS SALAFIYYAH

DAWATUS SALAFIYYAH
Elegant Enterprises

Sunday, July 26, 2015

DEOBANDI AUR IJMA KI AHMIYAT (PART 2)






Bismillahirrahmanirraheem

 
2) Deobandio K Nazdeek Ijma Ki Ahmiyat

A) Ameen Okarvi Kehta Hai:

“Rasool S.A.W Ne Ijmaee Faislo Se Inhiraaf Karnewale Ko Shaitan Aur Dozakhi Karaar Diya Hai."
[Tajalliyaat E Safdar 6/189]
Scan..



 

 B) Abdul Azeez Darul Uloom Deoband Ne Ek Sawal Ka Jawab Dete Hue Kaha Hai K:

"Iss Par Ijma Hai. Aur Mukhalif Aur Munkir Iss Ijma Ka Gumrah Hai."
[Fataawa Darululoom Deoband 9/49]
Scan..
 




C) Anwar Shah Kashmiri Farmate Hai:

“Ijma Ka Munkir Kaafir Hai”
[Naqsh E Dawaam Hayaat E Kashmiri Page 197]
Scan...

 



D) Sarfaraz Ghakkarwi Kehte Hai:

“Ijma Ka Munkir Kaafir Hai”
[Taskeen As-Sudoor 291]
Scan..

 

Upar Bayan Ki Gayi 4 Baato Se Ye Baat Saabit Hui K Ijma Ka Munkir Kaafir Hai Aur Jo Koi Bhi Ijma Ki Mukhalifat Karenga Woh Gumrah Shaitan Hai Aur Jahannumio Me Se Hai.

Note: Deobandi "Ittifaaq Ko Ijma Samajhte Hai."

Ameer Okarvi Ne Abdul Hayy Lakhnawi Ki Baat Bayan Karte Hue Kehte Hai:

"Iss Baat Par Ittefaq Hai K Aurto Ka Seene Pe Hath Bandhna Sunnat Hai.

[Al-Si’aya 3/152]

"Iss Se Maloom Hua K Aurto Ka Seene Pe Haath Bandhne Ka Ijmaee Masla Hai. Aur Ijma Ka Mukhalif Quran O Hadees K Muafiq Dozqi Hai."
 
[Tajalliyaat E Safdar 2/225]
Scan..





Aap dekh sakte hai k Ameen okarvi ulama k ittefaq ko Ijma keh rahe hai aur to aur us baat ki headline p bhi Ijma likha hai. Dusre bohut saare dalail bhi h lekin ameen okarvi Deobandio me fareb me sabse aage hai isliye ye kaafi hoga InshaAllah


#ImranKhanSalafi
#IslamicLeaks
#

Thursday, July 23, 2015

DEOBANDI IJMA KA MUNKIR (PART 1)





Asslamu Alaikum Wa Rahamatullahe Ta'la Wa Barkathu..

Bismillahirrahm
Anirr­aheem ..

Topic - Deobandi Ijma K Munkir.

Es Artical Me Dwobandio K..
1. Introduction
2. Ijma Ki Ahmiyat
3. Deobandi Khudke Manghadat Ijma K Bhi Munkir

Ka Bayan Hoga..

1-Introduction:

Deobandi Ijma K Munkir.

Deobandi Ahle Hadees Par Ye Jhuta Ilzam Lagate Hai K "Ahle Hadees Sirf Quran Aur Hadees/Sunnat Ko Mante Hai Aur Wo Ijma Ko Nahi Mante."

Ye Daawa Unke Kam Aqli Aur Nafs Paradti Ka Natija Hai. Humne Har Baar Iss Baat Ko Waazeh Tarah Se Bayan Kardi Hai K Ijma Ka Zikr Quran Aur Hadees Me Maujood Hai Aur Ijma Hujjat Hai Quran O Hadees Me. Ijma Khud Quran O Sunnat Se Akhaz Kiya Gaya Hai. Aur Deobandi Ye Baat Isliye Bhi Bayan Karte Hai Kyuke Ahle Hadees Manghadat/Maudhu Ijma Ko Nahi Maante Jo K Deobandi Sufi Muqallid Bidati Firqe Ne Ghada Hai. Ijma Woh Sahih Hai Ahlusunnah K Ulama Me Hua Naa K Wo Jo Deobandi Bidattio Ne Ghada Jo K Qabil E Qubool Nahi Hai. Ek Aur Baat Batadu K Deobandi Hamesha Ye Baat Bayan Karte Hai Unke Liye Quran Sunnah, Ijma, Qiyas Ye Daleel Hai Lekin Haqeeqat Me Unki Daleel Sirf Taqleed , Taqleed, Taqleed Aur Taqleed Hai. Hum Sab Ye Baat Jante Hai K Quran Sunnah, Ijma Aur Qiyas Inn Chizo Se Deobandi Muqallido Ka Koi Lena Dena Hi Nahi Hai. Muqallid Ki Daleel Sirf Uske Imam Ka Qaul Hai Jaisa K Deobandio K "Mufti" Rasheed Ahmed Ludhyanwi, Farmate Hai:

"Muqallid K Leye Serf Qoul Imam He Hujjat Hota Hai"

[ Irshaad Ul Qari Pg-288]
Scan..

 


 Aage Ese Kitab Me Rasheed Ludhyanwi Deobandi Lekhte Hai :

"Muqallid K Liye Hujjat Uske Imam Ka Qaul Hai Naa K Adilla E Arba'a"
[Irshaad Ul Qari Pg 412]

Scan..

 


Phir Bhi Unki Itni Majaal K Ye Awaam Se Jhhot Bayan Karte Hai K Ahlehadees Ijma Ko Nahi Maante. Iss Article Me Hum Aage Ye Baat Prove Karege Inshaallah K Deobani Ummat K Ijma K Hi Nahi Balke Unke Khud K Banaye Hue Baatil Ijma K Bhi Munkir Hai. Jaesa K Kch Log Kehte Hai K "Usool Todne K Liye Banaye Jaate Hai." Usi Tarah Deobandio K Waha "Ijma Ko Nakar Dene K Liye Banaye Jate






Monday, July 20, 2015

KYA MUHADDISEEN KI RAAYE SE ISTADLAL LENA UNKI TAQLEED KARNA HAI ??



Bismillahirrahmanirraheem

KYA MUHADDISEEN KI RAAYE SE ISTADLAL LENA UNKI TAQLEED KARNA HAI ??


Aaj Kal Facebook Par Muqallidin Ki Taraf Se Yeh Sawal Jor Pakadta Ja Raha Hai Ke
Muhaddisin Ki Raay Se Istadlaal Lena Unki Taqleed Karna Nahi To Aur Kya Hai.?

Is Sawal Se Zahir Hai
Muqallidin Yeh Chahte Hai Ke Kisi Tarah Taqleed Ko Sabit Kar De'n...

Aaj Ham Isi Sawal Ke Upar Mukhtasar Guftagu Karenge,Ummid Hai Ahle Elam Hajraat Isse Fayda Uthayenge.....

Sabse Pahle To Yeh Zahen Naseen Kar Le'n Ke Is Tarah Ka Amar Sahadat Ke Zumare Me Aata Hai, Aur Muhaddisin Ko Is Mamle Me Ahle Elam Hamesha Ba-Tor E Shahid Samajhte Rahe'n Hai

Deen E Islam Ne Shahadat Dene Wale Se Istadlaal Lene Ka Hukam Diya Hai Aur Khud Aap S.A.W Ne Kai Faisle Shahadat Ke Bina Par Kiya Hai...

Lee'aan Ka Masla, Ramzaan W Eid Ke Chand Par Shahadat Is Mamle Ki Aham Kadi Hai, Neej Yeh
Ke
Allah Ne Is Ummat Ko "Shuhada'a"(Logo Par Gawahi Dene Wala) Banaya Hai, Jaisa Ke Qur'aan E Karim Me Maujud Hai,

W Kazaalika Za'alnaakum Ummatau W Satal Leetakunu Shuhda'a Anal Naashi W Yakunar Rashul Alaikum Shahidaa

.
Tarzma:-
Hamne Tumhe Aadil Ummat Banaya Hai Taki Tum Logo Par Gawah Ho Jao Aur Rasul S.A.W Tum Par Gawah Ho Jaye'n... Surah Bakrah/143

Ek Jagah Par Is Tarah Irshad Farmaya:-
Ai Iman Walo Adal W Insaf Par Mazbooti Se Jame Raho
Aur Allah Se Dar Kar Gawahi Do.
Agar
Che Ye Gawahi Tumhare Maa-Baap Aur Rishtadar Ke Khilaf Hi Kyo Na Ho. Koi Ameer Ho Ya Fakir Dono Allah Ke Nigahbaani Me Hai.
So Tum Insaf Ko Chhodkar Apne Nafas Ki Khawahish Par Na Chalo
Agar Baat Bana Ke Gawahi Doge
Yaa
(Baat Bana Ke)Gawahi Dene Wale Me Samil Hoge To Itna Samajh Lo Ke Allah Ko Tumhare Sab Kaamo Ki Khabar Hai, Surah Nisha/135

In Ayat Se Saaf Pata Chalta Hai Ke Allah Ne Is Ummat Ko Sahi Gawahi Dene Ka Hukam Diya Hai,

Ab Kuchh Hadis Mulaahiza Farmaiye...
Hajrat Ubaidullah Bin Abdullah Kahte Hai Ke Hajrat Aaisha Ke Upar Jab Buh'taan Karne Walo Ne Jhooth Bola To
Aapne Ali Aur Usama Ko Bulaya:
Aur
Unse Hajrat Aaisa Ke Muta'aliq Puchha Ke Kya Main Aisha Ko Talaq De Du? Is Par Hajrat Usama Ne Farmaya
Ya Rasulallah Aisa Mat Kijiye Jaha'n Tak Main Shajrat Umar Se Riwayat Hai Ke
Jab Wahi Ka Aana Band Ho Gaya
To
Ham Logo Ko Zaahiri Aamal Se Pakadenge.
Agar
Koi Achha Kaam Karega
To
Ham Ispar Bharosa Karenge.Aur Iske Dil Me Kya Hai Isse Ham Koi Matlab Nahi Rakhenge. Kyo Ke Iska Hisab Allah Lega.
Aur
Agar Koi Zaahir Me Bura Karega To
Ham Ispar Bharosa Na Karenge
Aur
Na To Usko Siqah Samjhenge.
Agar Che Wo Dawa Kare Ke Mera Baatin Achha Hai
Sahi Bukhari 1/ 2462

In Tamam Riwayat W
Ayat E Qur'aani Se Pata
Chalata Hai Ke Agar Ham Kisi Nek Insan Ke Gawahi Par Kisi Ko Siqah W Gair Siqah Kahte Hai To
Wo
Taqleed Nahi Kahlata...

Balke Shahadat Ke Upar Faisla Karne Ka Hukam Hame Qur'aan W Hadis Ne Diya Hai...

Aur Jo Log Shahadat Ko Taqleed Se Jodte Hai
Allah Unpar Raham Kare
Aur
Ham Sabko Deen Ki Sahi Samajh Ata Farmaye Or Taqleed Parasto Ke Makro Fareb Se Bachaye ..

Friday, July 17, 2015

IMAM QIR'AT KARE TOH TUM KHAMOSH RAHO SE KYA SAMJHA JAAYE ??





ASslamu Alaikum Wa Rahamatullahe Ta'la Wa Barkathu..


Bismillahirrahmanirr­aheem ..


Topic - وإذا قرأ فأنصتوا (Imam Qirat Kare Tou Tum Khamosh Raho) Se Kya Samjha Jaye ?


Ahadees Mubarak Se Baaz Logo Ne Ye Samjha Hai K Ye Alfa'az Muqtadiyo Ko Sureh Fatiha Ki Qirat Se Mana Karne K Leye Aap Sallahu Alaihe Wasallam Ne Farmaya Hai,Leken Ager Es Ahadees Per Gour Kare Tou Esme Koi Aysa Lafz Nahi Jiska Mtb Ye Ho K Muqtadi Sureh Fatiha Na Padhe, Ahadees Me 2 Hukm Hai :

1-Suno
2-Chup Raho



Ab Dekhna Ye Hai K Keya Sunne Se Mura'ad Serf Padna He Hai Ya Sunne Wala Pad Ve Sakta H, Eske Leye Hum 2 Mesaale Bayan Karte Hai:

1-Nabi(S.A.W) Ne Apne Halat Bemaari Me Namaz Padhaye Leken Bemaari Aur Zaif Ki Wajah Se Jayada Buland Awa'az Se Takbeer Nahi Kah Sakte The Lehaza " Hazrat Abu Baqar R.A Logo Ko Nabi (S.A.W) Ki Takber Sunate The"
 

(Sahi Bukhari)

Ab Ager Sunne K Matlab Serf Ye Leya Jaye K Sunne Wala Apne Juban Ko Her Kat He Nahi De Sakta Tou Ye Baat Durust Nahi Kuki Sahaba-E-Kara'am ,Hazrat Abu Baqar Siddiq R.A Ki Takber Sunte Ve The Aur Khud Ve Takber Kahte The Jaisa K Sab Musalmano K Ab Ve Ese Tarah Amal Hai.
 

Aur Nabi(S.A.W) K Farma'an Hai "Jab Imaam Takber Kahe Tou Tum Ve Takber Kaho"
 

(Sahi Muslim Jild-1,Safa-174)

2-Ager Sunne K Matlab Serf Padna He Hota Tou Aza'an K Jawab Dene Ki Ve Izazat Na Hote.
Jabke Aap(S.A.W) Ne Farmaya :
 

"Jab Azaan Suno Tou Moazzin Ki Tarah Tum Ve Sath Sath Kahte Jao"
(Sahi Bukhari,Jild-1)



Waise Ve Aza'an K Jawab Wahi Dega Jo Aza'an Sunega,Lehaza Sabit Hua K Sunne Se Na-Padna He Mura'ad Lena Durust Nahi,Es Ahadees Mubaraka Me Dusra Hukm Chup Rahne K Hai,Eske Leye Ve Hum 2 Mesa'ale Bayan Karte Hai :

1-Hazrat Abu Huraira R.A Ne Hadees Bayan Farmate Hai:
Rasullah Sallahu Alaihe Wasallam Takber-E-Tahrema Aur Qirat K Darmiyan Thora Der Chup Rahte The,Maine Kaha Ya Rasullah (S.A.W) ! Aap Es Takber Aur Qirat K Darmiyan Ki Khamoshi K Doura'an Kya Padte Hai?
 


Aap (S.A.W) Ne Farmaya : Main Padta Hu "Allahum Ba Ad.........."Alhadee­s.
 

(Sahi Bukhari ,Jild-1,P-103)

Es Ahadees Se Belkul Wajeh Hai K Ahista Padna Aur Chup Rahna Dono Jama Ho Sakta Hai.

2-Hafiz Zubair Ali Zai Hafizullah Lekhte Hai :
 

Dil Me Khufiya Awa'az Se (Sirri) Padna Fa'anstawa (Ansahat/Khamoshi) K Khilaf Nahi Kuki Ahades Me Aaya Hai K Nabi(S.A.W) Ne Farmaya :
 

"Jo Saks Juma K Din Gusul Kare ,Aur Ager Uske Paas Khusbu Ho Tou Use Lagaye Aur Apna Accha Leba'as Pahne Fer Masjid Ki Taraf Jaye Fer Jo Mayas'sr Ho Namaz Padhe Aur Kisi Ko Takleef Na De Fer Jab Uska Imaam Aa Jaye Tou Ansa'at Kare (Khamosh Ho Jaye) Hatta K Namaz Padle , Ye Uske Aur Agle Juma K Darmiyan K Kaffara Ban Jayega"


(Musnad Ahmed 5/420 H-23571,Wa Sanae Hasan,Al Tabrani Al Akber 4/161 H-400,Asaara Al Sunna :913 Wa Qala Asnaae Sahi)


Ek Riwayat Me Aya Hai :
 


"Aur Fer Khamosh Rahe Hatta K Wo Apne Namaz Mokammal Ker Le Tou Sabka Juma Tak K Kaffara Ho Jayega"
 


(Sunan Nishai 3/103 H-1404)
 


Mazeed Malumaat K Leye Dekhe Mohammad Yusuf Ludyanwi Deobandi Ki Kitab "Ekhtelaaf-E-Ummat" Aur "Serat-E-Mustakim".
 

(Hissa-2 Safa-243,245,Dusra Nuskha Safa-453,455 Aur "Hadees Aur Ahle Hadees"(Safa-808)

Es Rewayat Ki Sanad Me Ibrahim Nakhi Mudallish Hai Leken Yahi Rewayat Dusre Sanad K Sath Bukhari (10) Me (Sam Iz Kharz Alimaam Anasa'at) Elkh Alfaaz Se Hai Jo Nishai Wale Riwayat Ki Ta'eid Karte Hai,Malum Hua K Nishai Wale Rewayat Ve Un Sawahie K Sath Hasan Ya Sahi Hai"

(Al Asa'am Samra 48 Jild-20 P-7,8)


Tambeh : Aal-E-Deoband K Nazdeq Ye Tamam Ahadees Sahi Hai,Pahle Hadees K Sahi Hona Aal-E-Deoband K Mohaddasa Aur Fakaye Namoe Se Sabit Naqal Keya Ja Chuka Hai Aur Nishai Wale Hadees Me Ibrahim Thkhi Mudallis Me Leken Aal-E-Deoband K Nazdeq Khairul Quraan Ki Tadlees Moser Nahi.
 

(Dekhe Tajalliyat e Safdar J-7 P-298,J-4 P-230,J-3 P-324)


Hazren Mohtram ! Jab Aap Ne Jaan Leya K Sunna Wa Chup Rahna Aahista Padna K Mukhalfat Nahi Tou Sabit Hua K " وإذا قرأ فأنصت " Se Fatiya Khul Fa Imaam Ki Mamaniyat Mura'ad Lena Durust Nahi.

Dusra Point :
" وإذا قرأ فأنصت "

Esse Kuch Ahnaaf Ager Muqtadi Ko Khamosh Rahne K Hukm Dete Hai Aur Juban Tak Ko Herkat Nahi Dena Hai Tou Ye Aqeeda Sara-Sir Galat Hai Kuki Baad Me Aane Wala Muqtadi Namaz (Jama'at) Me Samil Hona Chahe Tou Wo Kuch Na Padhe ?
 


1-TAKBER-E-TAHREMA
2-SANA
3-AUZOBILLAH
4-BISMILLAH
 


Chunche Es Baat Per Tamam Ahnaaf K Ittefaq Hai K Ager Jama'at Ho Rahe Ho Tou Baad Me Aane Wala Saks TAKBER-E-TAHREMA Kah Ker Namaz Me Dakhel Hoga.
 


Lehaza " وإذا قرأ فأنصت " K Matlab Ye Hua K Jab Imaam Qirat Kare Tou Koi Saks Juban Tak Ko Harkat Nahi De Sakta Tou Baad Me Aane Wala Saks TAKBER-E-TAHREMA Kaise Kah Sakta Hai ?


(Hum Ahle Hadees Imaam K Piche Sureh Fatiya Tak Padne K Qayal H Lehaza Ye Baat Khud Ahnaar Soche Jo Aysa Bolte Hai)

*Tesra Point...


Jis Hadees Me Ye Lafz Aya He Wo Hadees No-905 H Aur Adhuri Ve Hai. Lehaza Hadees Ki Tawel Ese Sahi Muslim Hadees 904 Se Ki Ja Rahe H. Kuki Hadees 905 Me Lafz Aya "Ese Tarah Dusre Sanad Es Lafz K Ezafa Paya Gaya"
 


Ab Jara Wo Hadees Dekhe Jisse Es Hadees Ki Tawil Ki Imam Muslim R.Al Ne, Hadees No-904 Me Aysha Kya Bayan Hai Jo Hazrat Qatada R.A Se Rewayat Karda Hadees Me Huzur Sallahu Alaihe Wasallam Ne Etne Bari Qaid Laga De !
\
Saye Bin Masoor>>Kutaiba Bin Sayed>>Abu Kamal>>Mohammad Bin Abdul Malik Al 
 Musi>>Abu Aula'an>>Katada>>Yun­ush Bin Zubair>>Hata'an Bin Abdul Raqasy R.A Se Rewayat Hai :


Hata'an Bin Abdul Raqasy K Bayan Hai K Maine Abu Musa Asri R.A K Sath Namaz Pad Raha Tha ,Jab Hum Log Tash'hud Me Baithe The Tou Piche Se Kisi Admi Ne Kaha :
 

"Namaz Neke Aur Jaka'at K Sath Farz Ki Gaye Hai"

Abu Musa Asri R.A Ne Namaz Ba'ad Pucha :
 

"Ye Baat Tum Me Se Kisne Kahi Hai ? "

Sab Log Khamosh Rahe Aap Ne Fer Kaha:
 

"Tum Log Sun Rahe Ho Batao K Tum Me Se Ye Baat Kisne Kahi ?"

Jab Sab Log Chup Rahe Tou Aap Ne Mujhse Kaha :
 

"Aye Hata'an ! Sayad Tum Ne Ye Kalama'at Kahe Hai"

Maine Arz Keya :
 

"Ji Nahi Maine Nahi Kaha"

Mujhe Tou Yeh Khof Hua Tha Kahi Aap Khafa Na Ho Jaye,Etne Me Ek Saks Ne Kaha :
 

"Ye Maine Kaha Hai Aur Esme Mere Neyat Serf Valai Aur Neke Ke The"

Abu Musha Ashri R.A Ne Jawab Deya :
 

"K Tum Log Nahi Jante K Tum Ko Apne Namaz Me Kya Padna Chaye........." (Kaafi Lambi Ahadees Hai)

[Sahi Muslim ,Hadees No-904]

Scan...
 




Mashaallah Kitna Saaf Wajahat K Sath Es Masle Ki Tawel Ke Ja Rahe ,Es Bayan Me Saaf Jahir Hota Hai K Esse Namaz Me Baate Karna Ya Fer Koi Ayse Baat Jo Nabi(S.A.W)Se Na Sabit Ho Or Acche Ya Valai Ki He Neyat Se Kuch Ve Kahna Karahiyat Ya Mawaniyat Sabit Keya Gaya.Jaisa K Dusre Ahadees Me Jikar Ata Hai,Ek Baat Clear Kar Dena Chala Hu Hadees No-904 Or 905 Sahi Muslim K Baab - "Tash'hud Ka Bayan" Me Aya Hai Chuke Ye Waqiya Tash'hue K Masail Se Talluq Hai.

Imam Muslim R.Al Ne Namaz Me Baat Karne K Talluq Se Pura Ek Baab He Bana Deya H Jiska Naam Hai.

"BAABU MAA YUNHA MINAL KALAAME FISSALAATI"

Jo Ese Hadees Se Talluq Rakhta Hai !
Zaid Bin Aqram Radiyallahu Tala Se Rewayat Hai:
 

"Hum Log Namaz Me Baatein Karte The Har Ek Apne Sathi Se Namad Ki Haalat Me Guftagu Kar Leta Tha Yaha Tak Ki Yeh Aayat Utri "Wa Kumu Lillahi Alakh" Pas Hum Ko Hukm Diya Gaya Khamosh Rahne Ka Aur Kalam Se Mana Farma Diya Gaya"

(Sahi Muslim)

Scan..


Scan...




Lehaza Esse Ye Baat Saaf Jahir Hota H K Namaz Me Muqtadi Khamosh Rahe Yaani K Apas Me Baat Chet Na Kare.

Sabse Akhere Point...


Ager Ahnaaf Ab Ve Nhi Mante Jo Khud Ko Muqallid (Jahil) Bolker Apne Imam Ki Pairwi Karte H Wo Ye Baat Jaan Le Ki Sahi Muslim Ki Hadees No-904 Me Saaf
 

Abu Musha Ashri R.A Ne Jawab Deya :
 

"K Tum Log Nahi Jante K Tum Ko Apne Namaz Me Kya Padna Chaye"

Scan..
 


Second Scan Sahi Muslim...




Esse Saaf Jahir Hota H K Imam K Piche Kya Padna Chayye K Nahi ?

*Hanafio (Ahnaaf) K Leye Lamha E Fekriya*


Muqallidin Hazraat Aksar Hadees Ko Tor-Maror Ker Ummat E Musalma K Samne Pess Karte H K Jisko Allah Hidayat Ve De De Tou Unhe Ye Gumrah Karne Per Lag Jaate H.
 


Aksar Ahnaaf Ko Ye Karte Hue Dekha Gaya H Ki Sir Kisi K Or Pair Kisi Or K ,Kuki Enhe Kufi Imam Sahab Se Qayas Wirasat Me Mele Hai Or Maharat Ve Hasil Hai Enhe.

Maine Aysa Es Leye Bola K Ye Hadees Ve Sahi Muslim Ki Out Of Contax Hai Kuki Jis Baab Me Ye Hadees Bayan Ki Gaye H Us Baab K Naam Hai "Tash'hud K Bayan" Or Masla Hal Ker Rahe H Qirat K !! Ye Loog Kavi Nhi Sudhrege Kuki Ager Ye Humare Aslaaf K Manhaz Per Chalege Tou Enke Manhaz Ko Juta Padega Jaisa K Muhaddiso Ne Mara H Juta,Her Muhaddis Ne Es Masle Per Ek Baab He Bana De Hai,Aur Kaha Lo Kar Lo Hal.


(1) Baab Imam Aur Muqtadi Ke Liye Qiraat Ka Wajib Hona Hazir Aur Safar Har Halat Mein Sirri Aur Zehri Sab Namazo Mein

Hum Se Ali Bin Abdullah Madini Ne Bayan Kia Unhone Kaha Ke Hum Se Sufyan Bin Ayeeyna Ne Bayan Kia Kaha Ke Hum Se Zehri Ne Bayan Kia Mehmud Bin Rabee Se Unhone Ubaada Bin Samit (Ra) Se Ke Rasool Allah Ne Farmaya Jis Shaks Ne Sure Fatiha Na Padhi Us Ki Namaaz Nahi Hui
Sahi Bukhari Jild No : 1
Hadith No : 756.


(2) Baab No : 9 Har Rakat Mein Sure Fatiha Padna Wajib Hai:
Sahi Muslim Jild No : 2
Hadith No : 29 Se 37 Tak


(3) Baab No : 131/132 Jo Koi Apni Namaaz Mein Sure Fatiha Ki Qiraat Chodde:
Sunan Abu Dawood Jild No : 1
Hadith No : 818 Se 824 Tak


(4) Baab Is Bayan Mein Ke Namaaz Nahi Hoti Bagair Sure Fatiha Ke:
Jaame Tirmithi Jild No : 1
Hadith No : 210


(5) Baab Namaaz Me Sure Fatiha Padhna Farz Hai:
Sunnan Nisai Jild No : 2
Hadith No : 911 Se 914


(6) Baab No : 11
Imaam Ke Piche (Sure Fatiha) Padhna :
Sunnan Ibne Maaja Jild No : 2
Hadith No : 837 Se 843


Ager Ab Ve Samjh Me Nahi Aate Tou Ye Dekhe Khud K Ulma Kya Tarzuma Karte H Baab Ka..
Sacan..





Aur Ager Ab Ve Kuch Logo Ko Nahi Samjh Me Aa Raha H Kya Sahi Hai Or Kya Galat Tou Khud K Ghar Ki Gawahi Per Gour Kare.
Nabi Akram (S.A.W) Farmate Hai :
''Jo Saks Namaz Me Sureh Fatiya Nahi Padta Uske Namaz Nahi Hote ''
[Sahi Bukhari,Hadees No-756]
Scan..




Ahnaaf Es Hadees K Ye Jawab Dete Hai K Ye Munafird K Leye Hai,Muqtade K Leye Nahi, Ab Lejye Ahnaaf Munafird K Leye V Reyat Dete Hai.
Sahab Hidaya Lekhte Hai :

''Quraan Farz Namazo Me 2 Rekat Me Wajib Hai''
[Hidaya Awalin : Safa127]


Scan..




Dusre 2 Rekat Me Namazi Ko Ekhteyar Hai Chahe Tou Khamosh Rahe Chahe Tou Qeraat Kare Aur Ager Chahe Tou Tasbeh Kah Le,Imam Abu Hanifa R.Al Se Ese Tarah Rewayat Keya Gaya Hai''


[Hidaya Awalin : Safa-128]
Scan..




Ager Apne Mere Puri Baat Tasalli K Sath Padhe Hai Aur Kuch Samjh Me Aya H Or Aap Kuch Samjhda'ar Ho Gaye Ho Tou Ye Baat Socho..!!
 


Allah Ki Kush Nudi K Leye Ager Imaam K Piche Ve Sureh Fatiya Padte Ho Tou Kak Qayamat K Din Kahi Yahi Amal Apke Leye Kaffara Ban Jaye Or Aap Jahnnum Ki Chungal S Bach Ker Jannat Me Jaane Wale Ban Jaao.


Mere Bhaio Kal Qayamat K Din Allah Paak Yahi Sawal Apse Karega Ki Tum Imaam K Piche.
 

1-TAKBER-E-TAHREMA Padt The !
2-SANA Padte The !
3-AUDOBILLAH Padte The !
4-BISMILLAH Padte The !
 

Hatta K Imaam Ki Kisi Galti Hone Per Imaam Ko Luqma Tak Dete The !
Mager Sureh Fatiha Nahi Padte The ! Socho Bhaio Jara Socho!



Allah Paak Hume Hak Baat Kahne Sunne Se Jayada Esper Amal Karne Ki Toufeeq De ! Aameen

#ImranKhanSalafi
#IslamicLeaks
#

Tuesday, July 14, 2015

MUHAMMAD HUSSAIN BATALWI RH AUR MUQALLIDEEN KE DHOKE







Bismillahirrahmanirraheem

 

MUHAMMAD HUSSAIN BATALWI  RH AUR MUQALLIDEEN KE DHOKE


TAQLEED MUTLAQ AUR TAQLEED SHAKHSI AUR MUQALLIDEEN KA DAKHAL


اہل باطل ،اہل حدیث کے خلاف پروپیگنڈہ کے لئے جن چیزوں کو بنیاد بناتے ہیں ان کی حقیقت کھلنے پر احساس ہوتا ہے کہ یہ اونچی دکان کے پھیکے پکوان سے زیادہ کچھ نہیں۔جواعتراضات بظاہر بہت بڑے اور قوی محسوس ہوتے ہیں انکی اصلیت سے پردہ ہٹنے کے بعدوہ اتنے ہی بے حقیقت، بے وقعت اور بے معنی نظر آتے ہیں۔اہل باطل کے اسی طرح کے ایک دھوکے کو ہم نے زیر نظر مضمون میں اللہ رب العالمین کی توفیق سے بے نقاب کرنے کی سعی کی ہے۔

مولانا محمد حسین بٹالوی رحمہ اللہ نے فرمایا: پچیس برس کے تجربہ سے ہم کو یہ بات معلوم ہوئی ہے کہ جو لوگ بے علمی کے ساتھ مجتہد مطلق اور تقلید مطلق کے تارک بن جاتے ہیں وہ آخر اسلام کو ہی سلام کر بیٹھتے ہیں۔(اشاعۃ السنۃ،صفحہ 88، جلد 11)

چونکہ مذکورہ عبارت عام مقلدین بالخصوص مسلک اہل حدیث سے تعصب اور بغض رکھنے والوں کے لئے نہایت پرکشش تھی اسی لئے اس مرغوب حوالے کو غالی مقلدین کی جانب سے تقلید کی اہمیت اور ترک تقلید کے نقصان میں بکثرت نقل کیا گیا ہے جیسے:

01۔ پرائمری اسکول ماسٹر امین اوکاڑوی کی کتاب تجلیات صفدر،جلد اول کے صفحہ 615 پر
02۔ یوسف لدھیانوی دیوبندی کی کتاب اختلاف امت صراط مستقیم کے صفحہ 30پر
03۔ صوفی منقار شاہ دیوبندی کی کتاب وھابیوں کا مکر و فریب کے صفحہ 62 پر
04۔ ابو بلال جھنگوی کی کتاب تحفہ اہل حدیث کی ہر جلد کے آخری ٹائٹل پر
05۔ سیدفخر الدین احمد دیوبندی کی کتاب رفع یدین صحیح بخاری میں پیش کردہ دلائل کی روشنی میں کے صفحہ نمبر 5 پر
06۔ صوفی محمد اقبال قریشی دیوبندی کی کتاب ھدیہ اھلحدیث کے صفحہ 239 پر
07۔ مولانا محمد شفیع دیوبندی کی کتاب مجالس حکیم الامت کے صفحہ 242 پر
08۔ سرفراز خان صفدر دیوبندی کی کتاب الکلام المفیدفی اثابت التقلید کے صفحہ 183پر
09۔ محمد زید مظاہری ندوی دیوبندی کی کتاب اجتہاد و تقلید کا آخری فیصلہ کے صفحہ 104 پر
10۔ رشید احمد گنگوہی دیوبندی کی کتاب سبیل السدادمیں

افسوسناک امر یہ ہے کہ متذکرہ بالا تمام احباب نے من مانی کرتے ہوئے مولانا محمد حسین بٹالوی مرحوم کی عبارت میں موجود لفظ’’ تقلید مطلق ‘‘سے تقلید شخصی کا من چاہا معنی مراد لیا ہے حالانکہ تقلید مطلق سے تقلید شخصی مراد لینے کی کوئی معقول وجہ یا قرینہ بٹالوی رحمہ اللہ کی زیر بحث عبارت میں سرے سے موجود نہیں۔ یوسف لدھیانوی دیوبندی مولانا بٹالوی رحمہ اللہ کی تقلید مطلق سے متعلق عبارت کو نقل کرنے کے بعد بغیر کسی قرینے اور شاہد کے اس سے الٹا اور برعکس مطلب و نتیجہ اخذ کرتے ہوئے لکھتے ہیں: یہیں سے یہ بات بھی معلوم ہوگئی ہوگی کہ عامی آدمی کو ایک معین امام کی تقلید ہی کیوں ضروری ہے؟ (اختلاف امت اور صراط مستقیم، صفحہ 31)

تقلید مطلق کو اپنی مطلب برآوری کے لئے بلاوجہ تقلید شخصی بنا دینا یوسف لدھیانوی جیسے دیانت و امانت کے دشمن دیوبندیوں کا ہی کام ہے!!!جھوٹ بولنا اور دھوکہ دینا عام آدمی کے لئے توبرا اور قابل مذمت فعل ہے ہی لیکن جب یہی ناجائز اور برا فعل ایک عالم دین کہلاوانے والے شخص سے جان بوجھ کر سرزد ہو تو اسکی مذمت اور برائی شدید ترہوجاتی ہے۔ اگر یہ بات ان تقلید کی بیماری میں مبتلا علما ئے سوء کو سمجھ میں آجائے تو یہ لوگ عوام الناس کو دغا دینے جیسے قبیح عمل سے تائیب کیوں نہ ہوجائیں؟!!
چونکہ دھوکہ دہی، دغابازی، غلط بیانی، مغالعہ انگیزی اور کذب بیانی جیسے افعال تقلید کی گندی کوکھ میں ہی پرورش پاتے ہیں اس لئے تقلید اور ان مکارم اخلاق چیزوں کاچولی دامن کا ساتھ ہے۔ یہ ہرگز ممکن نہیں کہ ایک شخص مقلد ہو اور وہ اپنے مذہب کے دفاع کے لئے جھوٹ نہ بولے اور لوگوں کو مبتلائے دھوکہ نہ کرے۔ بہرحال محمد حسین بٹالوی مرحوم کی عبارت اپنے مفہوم پر واضح اور دو ٹوک ہے جس سے مقلدین کا اپنے مطلب کا خود ساختہ معنی و مفہوم مراد لینے کی اس کے علاوہ کوئی معلوم وجہ نہیں کہ حق و باطل کو خلط ملط کرکے اپنے جاں بلب مذہب میں کچھ جان پھونکی جائے۔

اس بحث کومزید بہتر طور پر سمجھنے کے لئے ضروری ہے کہ تقلید کی اقسام اور انکی تعریف متعین و معلوم کر لی جائے۔تقلید کی دو اقسام ہیں جن میں ایک کوتقلید شخصی یا معین تقلید اور دوسری تقلید غیر شخصی یا تقلید مطلق کہا جاتا ہے۔حافظ زبیر علی زئی حفظہ اللہ تقلید کی ان اقسام کی تعریف اس طرح فرماتے ہیں:

1۔ تقلید غیر شخصی (تقلید مطلق)
اس میں تقلید کرنے والا (مقلد) بغیر کسی تعین وتخصیص کے غیر نبی کی بے دلیل بات کو آنکھیں بند کرکے، بے سوچے سمجھے مانتا ہے۔(دین میں تقلید کا مسئلہ، صفحہ 22)

تقلید مطلق کی اس تعریف کی تائید تقی عثمانی دیوبندی کی اس وضاحت سے بخوبی ہوتی ہے: ابتداء میں صرف تقلید مطلق ہی تھی جو کوئی جس کی چاہتا تقلید کر لیتا تھا۔(درس ترمذی، جلد اول، صفحہ 121)

اپنی ایک اور تصنیف میں تقی عثمانی صاحب تقلید مطلق کی تعریف ایسے کرتے ہیں: پھر اس تقلید کی بھی دو صورتیں ہیں: ایک تو یہ کہ تقلید کے لئے کسی خاص امام و مجتہد کو معین نہ کیا جائے، بلکہ اگر ایک مسئلہ میں ایک عالم کا مسلک اختیار کیا گیا ہے تو دوسرے مسئلہ میں کسی دوسرے عالم کی رائے قبول کرلی جائے اس کو ’’تقلید مطلق‘‘ یا ’’تقلید عام‘‘ یا ’’تقلید غیر شخصی‘‘ کہتے ہیں۔(تقلید کی شرعی حیثیت،صفحہ15)

پس معلوم ہوا کہ متعین کئے بغیراپنی مرضی سے کسی بھی امتی کی تقلید کر لینا ہی تقلید مطلق ہے۔

2۔ تقلید شخصی
اس میں تقلید کرنے والا (مقلد)تعین و تخصیص کے ساتھ، نبی ﷺ کے علاوہ کسی ایک شخص کی ہر بات (قول وفعل)کو آنکھیں بند کرکے،بے سوچے سمجھے اندھا دھند ماننا ہے۔(دین میں تقلید کا مسئلہ، صفحہ 22)

تقی عثمانی دیوبندی تقلید شخصی کی تعریف کرتے ہوئے رقمطراز ہیں: اور دوسری صورت یہ ہے کہ تقلید کے لئے کسی ایک مجتہد عالم کو اختیار کیا جائے، اور ہر مسئلہ میں اسی کا قول اختیار کیا جائے، اسے ’’تقلید شخصی‘‘ کہا جاتا ہے۔(تقلید کی شرعی حیثیت،صفحہ15)

ملا جیون حنفی لکھتے ہیں: اس بات پر اجماع ہے کہ صرف چار وں اماموں کی اتباع کی جائے گی۔(تفسیرات الاحمدی،صفحہ 566)

اس عبارت میں تقلید کے لئے صرف چار اماموں کا تعین و تخصیص ہی تقلید شخصی کی مثال ہے۔یاد رہے کہ ان چاروں میں سے ایک وقت میں صرف ایک ہی کی تقلید آل تقلید کے ہاں ضروری اور واجب ہے ۔جیسے خلیل احمد سہانپوری لکھتے ہیں: اس زمانے میں نہایت ضروری ہے کہ چاروں اماموں میں سے کسی ایک کی تقلید کی جائے بلکہ واجب ہے۔(المہند علی المفند،صفحہ38)

تقلید کی ہر دو اقسام کی تعریف کے تعین پر فریقین کے اتفاق سے یہ تفصیل سامنے آئی کہ ائمہ اربعہ میں سے صرف ایک امام کی تقلید، تقلید شخصی ہے اور ائمہ اربعہ یا ان کے علاوہ ائمہ میں سے کسی مخصوص امام کا تعین کئے بغیر بلادلیل جس سے جو چاہا مسئلہ لے لینا اور اس پر عمل کرنا تقلید مطلق ہے۔

مندر جہ بالا تفصیل سے تقلید شخصی اور تقلید مطلق کا فرق واضح ہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ محمد حسین بٹالوی رحمہ اللہ کی زیر بحث عبارت ابوحنیفہ کی اندھی تقلید کے دعویداروں کے سراسر خلاف جاتی ہے کیونکہ ان مقلدین کے ہاں مطلق تقلید حرام اور موجب گمراہی جبکہ تقلید شخصی واجب ہے۔ اب مخالفین کے اپنے مستند علماء کی عبارات کی روشنی میں دیکھتے ہیں کہ وہ لوگ جو بٹالوی مرحوم کی عبارت کو اپنے حق میں اور مخالفین کے خلاف استعمال کرتے ہیں وہ تقلید شخصی اور تقلید مطلق کو کیا حیثیت و اہمیت دیتے ہیں اور تقلید کی ان دو اقسام میں سے کون سی تقلید ان کے ہاں صحیح اور کونسی غلط بلکہ موسبب فتنہ و گمراہی ہے۔

1۔ پرائمری اسکول ماسٹر امین اوکاڑوی دیوبندی تقلید شخصی کی ضرورت اور تقلید مطلق کے نقصان کی وضاحت میں رقم طراز ہیں: علماء نے تقلید شخصی کو واجب قرار دیا ہے کیونکہ اگر عامی آدمی کو اس کی اجازت دی جائے کہ اس کو اختیار ہے کہ کسی امام کے مذہب کو لے کر وہ اس پر عمل کر لے تو اس صورت میں رخصت اور آسانی تلاش کرے گا ۔اس کا دل چاہے گا تو ایک چیز کو حلال کہے گا اور کبھی خیال بدل گیا تو وہ اسی کو حرام کہے گا کیونکہ ائمہ اربعہ میں بعض احکام میں حلت و حرمت کا اختلاف ہے۔(تجلیات صفدر، جلد اول، صفحہ 655)

پس امین اوکاڑوی دیوبندی کی اس عبارت سے ثابت ہوا کہ مقلدین کے ہاں تقلید مطلق سراسر گمراہی ہے۔لیکن اس کے باوجود بھی آل تقلید کی ستم ظریفی اوردھوکہ دہی ملاحظہ فرمائیں کہ بٹالوی رحمہ اللہ کی جو عبارت براہ راست خود ان کے تقلیدی مذہب کے خلاف تھی اسی عبارت کو کس دیدہ دلیری سے انہوں نے اپنے مخالفین یعنی تقلید نہ کرنے والوں کے خلاف بطور ہتھیار استعمال کیا ہے۔

2۔ اشرف علی تھانوی کے اس کلام میں بھی تقلید مطلق کے باعث فساد ہونے کا واضح اشارہ موجودہے: تقلید شخصی ضروری ہے اور مختلف اقوال لینا متضمن مفاسد ہے۔(ھدیہ اھلحدیث، صفحہ 78)

3۔ تقی عثمانی دیوبندی عوام الناس کو مطلق تقلید سے ڈراتے ہوئے فرماتے ہیں: صرف ایک امام کی تقلید لازم و ضروری بلکہ واجب ہے،کبھی کسی کی اور کبھی کسی اور کی تقلید کی تو گمراہ ہوجائے گا اور دین کھلونا بن جائے گا۔(درس ترمذی، جلد اول، صفحہ 120)

4۔ نور محمد قادری تونسوی دیوبندی تقلید مطلق کودین و مذہب کے لئے سنگین خطرہ قرار دیتے ہوئے رقم طراز ہیں: کوئی مسئلہ کسی امام کا اور کوئی کسی کا ،لے کر چلنابھی درحقیقت امام کی اتباع کے نام پر اتباع خواہش ہے جو آدمی کے دین اور ایمان کے لئے خطرے کا سنگ میل ہے۔(سہ ماہی قافلہ حق،شمارہ نمبر7، صفحہ 9)

5۔ تقی عثمانی صاحب ایک اور مقام پر رقم طراز ہیں: ابتداء میں صرف تقلید مطلق ہی تھی جو کوئی جس کی چاہتا تقلید کر لیتا تھا آخر اس میں قباحتوں نے جنم لینا شروع کیا یا اس کا خدشہ تھا۔(درس ترمذی، جلد اول، صفحہ 121)

درج بالا حوالے میں وہ کون لوگ ہیں جو ابتداء میں تقلید مطلق پر عمل پیرا تھے اس کی وضاحت کرتے ہوئے مفتی تقی عثمانی دیوبندی لکھتے ہیں: مذکورہ مثالیں تو تقلید مطلق کی تھیں یعنیٰ ان مثالوں میں صحابہ و تابعین نے کسی فرد واحد کو معین کرکے اس کی تقلید نہیں کی بلکہ کبھی کسی عالم سے مسئلہ پوچھ لیا اور کبھی کسی اور سے۔(تقلید کی شرعی حیثیت، صفحہ 43)

بقول مقلدین تقلید مطلق پہلے جائز تھی ا س لئے کے اس میں خیر تھی کیونکہ ان کے خیال سے صحابہ تقلید مطلق پر عمل پیرا تھے لیکن اب اس میں سوائے شر کے اور کچھ نہیں ۔مطلب یہ کہ موجودہ زمانے میں تقلید شخصی چھوڑ کر تقلید مطلق اختیار کر لینا یقینی گمراہی کا سبب ہے۔

مندرجہ بالا دلائل سے یہ حقیقت سامنے آئی کہ دیوبندیوں نے صرف شعبدہ بازی سے کام لے کر تقلید مطلق سے تقلید شخصی کشید کرنے کی ناکام کوشش کی ہے وگرنہ پیش کردہ اہل حدیث عالم محمد حسین بٹالوی رحمہ اللہ کی عبارت سے اظہر من الشمس ہے کہ تقلید مطلق کو ترک کرنے والا بالآخر گمراہ ہوجاتا ہے اس کے برخلاف و برعکس آل تقلید کے نزدیک تقلید مطلق کو اختیار کرنے والاگمراہ ہوجاتا ہے۔اس زبردست تضاد واختلاف کے باوجود بھی مقلدین کا ایک ایسی عبارت کو جو ان کے تقلید ی نظریہ کے خلاف ہے، سینہ زوری کرتے ہوئے اپنے حق میں استعمال کرنا ظاہر کرتا ہے کہ یہ لوگ دیانت و امانت سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں اور اس بات سے بھی بالکل بے خوف ہیں کہ انکی کھلی دغابازی کا پول کھلنے پر انہیں شرمندگی اور ندامت بھی اٹھانی پڑ سکتی ہے۔یہ حضرات شاید اہل حق کو بھی تقلیدی بیماری کے شکار لوگوں کی طرح اندھا اور بہرا جاننے کی شدید غلط فہمی میں مبتلا ہیں۔

اسی طرح جہاں تک اہل حدیث عالم محمد حسین بٹالوی مرحوم کی( مقلدین کی جانب سے نقل کر کے اہل حدیث ہی کے خلاف پیش کی جانے والی) عبارت میں مجتہد مطلق کے تارک بننے کو ناپسندیدہ اور گمراہی کا سبب بتایا گیا ہے تو یہ بات بھی آل تقلید کے حق میں نہیں بلکہ ان کے خود ساختہ مذہب کے خلاف ہے کیونکہ انکے ہاں مطلق مجتہد کے بجائے مخصوص اور متعین مجتہدین سے چمٹے رہنا اور انکی اندھی تقلید کرتے رہنا ہی واجب ہے جنھیں ائمہ اربعہ کے نام سے موسوم کیا جاتاہے یعنی امام مالک، امام شافعی، امام احمد بن حنبل اور امام ابوحنیفہ ۔ احناف کی انتہائی معتبر کتاب مسلم الثبوت میں مندرج ہے: عوام الناس بحث اور تحقیق نہیں کرسکتے تو ان پر چار اماموں کی تقلید لازمی ہے جو تحقیق کر چکےہیں۔(مسلم الثبوت: 2/407 )

صاوی نے سورہ کہف کی تفسیر میں لکھا ہے: چار مذاہب کے علاوہ کسی کی تقلیدجائز نہیں۔

مقلدین نے اس سے آگے بڑھتے ہوئے صرف ائمہ اربعہ کی تقلیدکے واجب ہونے پر اجماع کا خود ساختہ دعویٰ بھی کردیا ہے۔چناچہ ملاجیون حنفی نے لکھا ہے: اس بات پر اجماع ہے کہ صرف چاروں اماموں کی اتباع کی جائے۔ (تفسیرات الاحمدی، صفحہ 566)

قارئین سے عرض ہے کہ زرا ایک مرتبہ پھر آغازمضمون میں نقل کی گئی بٹالوی مرحوم کی عبارت کو بغور پڑھیں اور دیکھیں کہ بٹالوی رحمہ اللہ کے نزدیک تو مطلق مجتہد سے تعلق توڑنے والا بالآخر اسلام کو ہی سلام کر بیٹھتا ہے جبکہ آل تقلید کے ہاں مطلق مجتہد سے تعلق جوڑنے والا گمراہی کی وادیوں میں گم ہوجاتا ہے کیونکہ ان کے ہاں مطلق مجتہد کی تقلید اختیار کرنا اجماع کی مخالفت اور واجب کا انکارہے۔تقلید ی حضرات اپنے خود ساختہ ائمہ اربعہ کے علاوہ کسی اور کو تو دور کی بات کسی صحابی کو بھی واجب الاتباع و تقلید ماننے کو تیار نہیں۔

مسلم الثبوت میں لکھا ہے: محققین کا اس پر اجماع ہے کہ عامتہ المسلمین صحابہ کرام کی تقلید اور اتباع نہیں کرینگے کیونکہ بسا اوقات ان کے اقوال واضح نہیں ہوتے۔(مسلم الثبوت: 2/407 )
 

احناف کے اس اصول میں مجتہدین اربعہ سے کروڑہا درجے بہتر اور علم وفضل، نیکی وتقوی اور قر آن و حدیث کی معرفت اور فقاہت میں افضل ترین مجتہد صحابہ کرام کی واضح تنقیض اور توہین پائی جاتی ہے اور اس پر متزاد انکے بزرگان دین کے ادب و احترام کے کھوکھلے بلند و بانگ دعوے!!! احناف کے ان مسلمہ اصولوں کے بعد انہیں بٹالوی رحمہ اللہ کی عبارت کو اہل حدیث کے خلاف پیش کرتے ہوئے ہزار بار شرمانا چاہیے تھاکیونکہ مذکورہ عبارت خود احناف ہی کے خلاف ہے۔ لیکن آہ!شرم تم کو مگر نہیں آتی

محمد حسین بٹالوی رحمہ اللہ کی زیر بحث عبارت کے دیگر جوابات کے لئے تحفہ حنفیہ بجواب تحفہ اہل حدیث از محمد داود ارشد اور صراط مستقیم اور اختلاف امت بجواب اختلاف امت صراط مستقیم از مولانا صغیر احمد بہاری رحمہ اللہ کی مراجعت 

 فرمائیں۔


ImranKhanSalafi#
AmirAdnan#
IslamicLeaks#